Tusif Ahmad

TUSIF AHMAD

Surah Ar-Rahman
120 x 80 cm
Code: 13126

Description

Description

Done by hand with a craft blade, this beautiful wall decor is cut to precision. Artwork material is thin sheet of vinyl.

The cost of each paper cut varies depending on size and detail. Please contact me for price.

Customizable? Just message me and I can work with you in whatever custom wall hanging you’d like.

***FRAMES—This listing does not come framed however, you CAN purchase a frame by messaging me. I can add a frame to your order. Frames cost will be separate depending on size of artwork.

The paper cut itself comes in a clear sleeve with round cardboard support. For refunding policies please visit our contact page.

English

English

This artwork of Surah Rahman is verse number one to 18.
At the very center of this artwork, Rahman’s calligraphy is done in such a way that a pregnant woman appears in the distance. It is a hadith Qudsi that when Allah created mercy, He said to it: I am Rahman and you are mercy. I have derived your name from my name. So who will meet you. (i.e. will reward mercy) I will also reconcile him and whoever cuts you off, I will cut him to pieces. Since the word Rahm is derived from Rahman, so it is shown here that just as a mother nurtures her unborn child with love and mercy, so does Allah the Exalted be kind to us.
From the bottom on the right side, the first verse begins, in which the knowledge of the Qur’an is expressed through the use of pen and dowt.
An attempt has been made to show the moon and the moon in the solar system and different orbits. And along with this above, it is written in such a way that both “n” are connected with the paths of the planets.
Verses 7, 8 and 9 are talking about balance. These verses are balanced to a point by writing them in a circular form.
Verses 10, 11 and 12 are written in circular form to represent the earth.
Verse number 13 is written in the shape of an eye to explain the meaning of “So, O Jinns, which blessings of your Lord will you deny?”
Man has also been given the concept of dry soil by writing that he made it out of dry rotting mud.
And since the jinn was created from fire, the idea of ​​the jinn is also expressed within it by keeping the flame in the concept. Along with the same verse, it is written in tears that “O Jinns, which of the blessings of your Lord will you deny?”
Both the east and the west, the master and lord of all is the same. The paper is cut out from around the east and from the inside to the west, making a diagram of the world to show. Which also makes the concept of night and day prominent.
At the same time, it is written with flower branches that “So, O Jin Vans, which of the blessings of your Lord will you deny?”

Urdu

Urdu

سورۃ الرحمن کا یہ آرٹ ورک آیت نمبر ایک سے ۱۸ تک ہے۔
اس آرٹ ورک کے بالکل درمیان میں الرحمن کی خطاطی کچھ اس طرح سے کی گئی ہے کہ دور سے ایک حاملہ عورت ظاہر ہوتی ہے۔ حدیث قدسی ہے کہ جب اللہ تعالیٰ نے رحم پیدا کیا تو اس سے فرمایا :۔ میں رحمان ہوں اور تو رحم ہے ۔ میں نے تیرے نام کو اپنے نام سے اخذ کیا ہے ۔ پس جو تجھے ملائے گا ۔ ( یعنی صلہ رحمی کرے گا ) میں بھی اسے ملاؤں گا اور جو تجھے قطع کرلیگا میں اسے پارہ پارہ کردوں گا۔ چونکہ رحم کا لفظ الرحمن سے نکلا ہے اس لیے یہاں یہ ظاہر کیا گیا ہے کہ جیسے ماں اپنے ہونے والے بچے کی پرورش محبت اور رحم سے کرتی ہے ایسے ہی اللہ پاک بھی ہم پر مہربان رہتے ہیں۔
دائیں جانب نیچے سے پہلی آیت شروع ہوتی ہے جس میں علم القرآن کو قلم اور دوات سے ظاہر کیا گیا ہے۔
الشمس والقمر بحسبان کو نظام شمسی اور مختلف مدار سے ظاہر کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ اور اس کے ساتھ ہی اوپر کن فیکون ایسے لکھا گیا ہے کہ دونوں “ن” کو سیاروں کے راستوں سے جوڑ دیا دیا گیا ہے ۔
۷ ، ۸ اور ۹ نمبر آیات میں میزان کی بات ہو رہی ہے۔ ان آیات کو چکور شکل میں لکھ کر ایک نقطہ پر متوازن کیا گیا ہے۔
۱۰، ۱۱ اور ۱۲ نمبر آیات کو گول شکل میں لکھ کر زمین کا تصور پیش کیا گیا ہے۔
۱۳ نمبر آیت کو ایک آنکھ کی شکل میں لکھ کر “پس اے جن وانس تم اپنے رب کی کون کون سی نعمتوں کو جھٹلاوگے” کے مطلب کو واضع کیا گیا ہے۔
انسان کو اُس نے ٹھیکری جیسے سُوکھے سڑے ہُوے گارے سے بنایا لکھ کر ساتھ ہی سوکھی مٹی کا تصور بھی دیا گیا ہے۔

اور چونکہ جن کو آگ سے پیدا کیا گیا اس لیے یہاں تصور میں شعلہ کو مدنظر رکھ کر اس کے اندر جن کا خیال بھی ظاہر کیا گیا ہے۔ اسی آیت کے ساتھ بڑے سے آنسو میں لکھا گیا ہے کہ “پس اے جن وانس ، تم اپنے رب کی کون کون سی نعمتوں کو جھٹلاو گے”
دونوں مشرق اور دونوں مغرب، سب کا مالک و پروردگار وہی ہے۔ کو ظاہر کرنے کے لیے دنیا کا خاکہ بنا کر مشرق کے اردگرد سے کاغذ کو کاٹا گیا ہے اور مغرب کے اندر سے۔ جس سے رات اور دن کا تصور بھی نمایاں ہوجاتا ہے۔
اسی کے ساتھ ساتھ پھولوں کی ٹہنیوں سے لکھا گیا ہے کہ “پس اے جن وانس تم اپنے رب کی کون کون سی نعمتوں کو جھٹلاو گے”

Arabic

Arabic

هذا العمل الفني لسورة الرحمن هو الآية رقم واحد إلى 18.
في قلب هذا العمل الفني ، يتم عمل خط الرحمن بطريقة تظهر فيها امرأة حامل من بعيد. وهو حديث قدسي أنه لما خلق الله الرحمة قال له: أنا رحمن وأنت رحمة. لقد اشتقت اسمك من اسمي. إذن من سيلتقي بك. (أي أرحمك) أنا أيضا أصالحه ومن قطعك أقطعه أشلاء. ولما كانت كلمة “رحم” مشتقة من كلمة “رحمن” ، فإنه يتبين هنا أنه كما ترعى الأم طفلها الذي لم يولد بعد بالحب والرحمة ، كذلك فإن الله تعالى يرحمنا.
من الأسفل إلى اليمين ، تبدأ الآية الأولى ، حيث يتم التعبير عن معرفة القرآن باستخدام القلم والدوت.
جرت محاولة لإظهار القمر والقمر في النظام الشمسي ومدارات مختلفة. وإلى جانب هذا أعلاه ، فقد تمت كتابته بطريقة تجعل كلا الحرفين “n” مرتبطين بمسارات الكواكب.
الآيات 7 و 8 و 9 تتحدث عن التوازن. تتم موازنة هذه الآيات إلى حد ما من خلال كتابتها في شكل دائري.
كُتبت الآيات 10 و 11 و 12 بشكل دائري لتمثيل الأرض.
الآية رقم 13 مكتوبة على شكل عين لتوضيح معنى “إذن أيها الجن ، ما هي بركات ربك التي تنكرها؟”
أُعطي الإنسان أيضًا مفهوم التربة الجافة من خلال كتابته أنه صنعها من الطين الجاف المتعفن.
وبما أن الجن مخلوق من نار ، فإن فكرة الجن يتم التعبير عنها أيضًا بداخلها بالحفاظ على الشعلة في المفهوم. جنبا إلى جنب مع نفس الآية ، مكتوب بالدموع أن “يا جن ، أي من بركات ربك تنكر؟”
كل من الشرق والغرب ، السيد والسيد هو نفس الشيء. تم قطع الورق من جميع أنحاء الشرق ومن الداخل إلى الغرب ، مما يجعل رسمًا تخطيطيًا للعالم لإظهاره. مما يجعل مفهوم الليل والنهار بارزًا أيضًا.
في الوقت نفسه ، مكتوب بأغصان الزهور “إذن ، يا جين فانز ، أي بركات ربك ستنكرها؟”

Shop
Wishlist
0 items Cart
My account